راکھی باندھتا ہے مجھے میرا پندرہ سال چھوٹا بھائی؛ “میں تیری رکھشا کروں گا۔” ارے تو میری کیا رکھشا کرے گا۔ میں تیری پندرہ برس سے رکھشا کر رہی ہوں۔ تیری ناک جب سے بہہ رہی تھی۔
میں دعوے سے کہتا ہوں کہ اپنے سماج میں عورت کے مقام پر اس سے کاٹدار گفتگو آپ نے کبھی نہیں سنی ہو گی۔
مجھے پتہ ہے آپ خود بخود اسے شئیر کرنے پہ مجبور ہو جائینگے